حالت حیض میں بیگم سے جنسی مزے لینے کے بارے میں کیا شریعت اس کام کی اجازت دیتی ہے ؟

جب عورت کو پریڈز اتے ہیں تو وہ نہ پاک ہو جاتی ہیں اس حالت میں نماز روزہ اور تلاوت کرنے کی اجازت نہیں ہوتی مگر جو نماز اور روزہ حیض کی حالت میں رہ جائے تو اسے پاک ہونے کے بعد قضا ادا کرنے کا حکم ہے لیکن اس کا مطلب اس کا یہ حکم نہیں کے عورت کو باقی گھر والوں سے الگ کر دیا جائے حالت حیض میں عورت کھانا بنا سکتی ہے گھر کے باقی تمام کام کر سکتی ہے شوہر کے ساتھ سو سکتی ہے لیکن جنسی لذت لینا جائز نہیں ہےشریعت محمدی صلی الله علیہ وسلم واضح کیا گیا ہے کے اگر عورت حالت حیض میں شوہر کی پاس سونا چاہیے تو سو بلکل سو سکتی ہے لیکن اگر شہوت کا خطرہ ہو تو بستر الگ کر دیا جائے جنسی شہوت آنے سے عورت کی شرمگاہ سے رطوبت کا احراج ہوتا ہے رطوبت انے سے غسل واجب ہو جاتا ہو جاتا ہے

حیض کی حالت میں غسل نہیں کیا جاتا لہذا حیض کے دنوں میں بیوی اور شوہر کو ایک دوسرے سے کسی بھی قسم کی جنسی لذت لینا جائز نہیں ہے البتہ جنسی جذبات کو قابو میں رکھتے ہوے شوہر اور بیوی ایک دوسرے کو چو سکتے ہیں چوم سکتے ہیں ایک دوسرے کے ساتھ کھاپی اور سو بھی سکتے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *